Charleston: A terrorist attack in America

There was a horrendous terrorist attack in Charleston last night. A White-supremacist terrorist walked into a historic Black church and shot 9 people in cold blood: Of course it was a terrorist attack. That seems an easy call.

Now I don’t see much American news directly on the media (meaning I don’t watch CNN or FOX or whatever, i get my news from Twitter and Facebook and from links put there by people) so I don’t know if it is being described as such by them. Maybe not. Several friends on Twitter and FB have certainly complained that it is not being portrayed as a terrorist attack and only Muslim attacks get portrayed that way and why and so on. Well, I had an “off the cuff” response on FB to one such complaint and I am just posting it here so that I can link to this when it comes up again:

I get my news via twitter and FB and on twitter and FB I see many people (many of them conservative Americans..I follow a lot of educated conservatives) calling him a terrorist. In fact, whenever the issue has been raised, I have not seen a single person on my timeline trying to argue that he is not a terrorist. It seems an easy call in this case. And SOME media seems to be calling him a terrorist:

save image

At the same time, I dont agree with the notion that ALL mass casualty attacks should be labelled terrorism. I think the ones carried out for a cause, i.e. by people acting as members or free-lance supporters of specific political causes, should be called terrorism…some such attacks (or even many such attacks) are true nutcases and loner psychopaths whose cause, if any, is entirely in their head. Sometimes a cigar is just a cigar… If a deranged Muslim attacks a school based on some psychotic (as in clinical psychosis) delusion and not as part of the (very real) international Jihadist cause, he too should not be labeled a terrorist and should be called a lone psychopath, etc.

On the other hand, If, (as in most attacks by Muslims in the West) the Muslim concerned is actually reasonably sane and is acting (no matter how foolishly) on behalf of international Jihad, then his actions can be called terrorism. Why not?

But as I said, I dont think of the name as being the biggest issue, though it is certainly an issue. In fact, it is one of my beefs with the postmarxist Western Left (defined very loosely) that they have been led (partly by people like Edward Said, partly because this sort of thing is just a feature of modern intellectual life, i.e. “a feature, not a bug” kind of situation; with the “left” having an unhealthy proportion of academics to real politicians, it was sort of bound to happen, etc etc..what came first, chicken or egg? endless arguments possible) into this blind alley where what is mostly fluff (what words were used, what tone was used, what was said in some novel by Jane Austen) is the biggest issue in society and much bigger and more substantive questions (specific historical background, organization, popular mobilization, TECHNOLOGY, correspondence of your theory of the world with historical, psychological, social or economic reality) are pushed down the list… It is a self-defeating strategy. In fact, it is so self-defeating that one can imagine a scenario (not literally true, but the imaginary scenario illustrates a point) where Mossad or the CIA decide that the best way to destroy their opponents is to get them to take every real issue (for example, racism) to some absurd and unreal level, so out of touch with reality that real fissures in your opponents camp and real historic opportunities are missed and the “activist” lives his life inside some bubble, with endless loops of arguments about semiotics and microaggressions and other bullshit…all the while, the real world and its far more consequential oppressions and injustices can carry on unconcerned. Probably no one planned it that way (intelligence agencies are rarely that intelligent) but something like that has happened (see this old post of mine to see what I mean in a slightly different context).

By the way, I do recognize that today is probably the worst day for me to say this sort of thing. With even a stuck clock being right once a day, this day happens to be the time when the stuck clock of the SJW brigade is (almost) right.
save image

Something like that.

PS: Anil Das on twitter raised the point that the designation is imporant in terms of what funds are available to combat that sort of crime. Terrorism gets more money than hate-crime. That may well be true, but that is NOT the point my friends were raising. IF they raised that point, they would be saying something of practical significance. My whole point is that too much of the time, it is NOT a practical issue (and even when it is, the practical aspect is not what triggered the social media concern).

The early FB post that triggered this discussion (this was before he had been identified)

Embedded image permalink

Myths of Radicalisation

Frank Furedi has a piece up in Spike. 

Excerpts:

Reports that three sisters from Bradford and their nine children are on their way to Syria show that British Muslims inspired to make the journey potentially to join the Islamic State are no longer unusual or unique individuals. Likewise, the response to the reports shows how bewildered and confused many now are when confronted with the so-called radicalisation of fellow members of society.
The very language used to discuss the sisters’ preference for life in Syria over life in Britain betrays a complete lack of comprehension of the social and cultural dynamics at work. Bradford West MP Naz Shah, who spoke with the families of the sisters, stated, ‘I asked them if there was any indication [as to what the sisters were planning to do], and they said, absolutely not – it was a shock to them, it came out of the blue’. That it always comes ‘out of the blue’ is testimony to a failure to understand the cultural chasm that separates the world of many young Muslims from mainstream society.
Others report that the women came from a ‘hardworking’ and ‘respectable’ family. Yet young people going to Syria invariably come from normal families. The fact that the parents’ respectability is remarked upon at all shows that commentators are fixated on a non-existent pathology…


..What Clarke identified was a symptom of a far more profound and difficult problem. Young people do not turn into suicide bombers overnight or ‘out of the blue’, unless they can draw on cultural and political resources that affirm their decision. They draw support for their conviction that theirs is a cause worth fighting for from their everyday experience.


..The myth of grooming
Anglo-American societies have become so obsessed with child protection that they often interpret a variety of social problems through the prism of paedophilia. The idea of online grooming, for instance, has mutated into a fantasy used to explain every disturbing example of homegrown jihadism. The model of perfidious groomers seducing otherwise innocent young Muslims turns what is a struggle of ideas, a battle between ways of life, into a malevolent act of deception.
No doubt there are some clever online jihadists who are good at attracting the attention of would-be supporters. However, no one is forcing people to go online or to enter chatrooms or visit jihadist websites. Most of the time, it is the so-called vulnerable youth who, in the process of searching for answers, actively look for the ‘groomers’.


…In reality, the term radicalisation captures only part of the story. The sentiments and behaviours associated with radicalisation are more accurately expressed through terms like ‘alienation’ and ‘estrangement’. The sense of estrangement from, and resentment towards, society is logically prior to the radicalising message internalised by individuals. In Europe, the embrace of a radical Islamist ideology is preceded by a rejection of society’s Western culture. Invariably, such a rejection on the part of young jihadists also reflects a generational reaction against the behaviour and way of life of their parents.
This double alienation – from parent and society – is not unconnected to normal forms of generational estrangement. What we see here is a variant form of the generational gap, except that, in this instance, it has unusual and potentially very destructive consequences.


The embrace of radical Islam is underpinned by a twofold process: an attraction to new ideas and alternative ways of life, and a rejection of the status quo. The radicalisation thesis, however, one-sidedly emphasises the so-called groomers’ powers of attraction…

My own comment: They are not rejecting their parent’s values completely. They are embracing their “formal values”, while rejecting their “lived values”. The Islam their parents taught them almost certainly included Jihadist and anti-infidel elements that, taken literally and taken to their “logical conclusion”, lead to Jihad in Syria, if not in Britain itself. Their parents failed to teach them how they selectively follow this “ideal” and compromise with reality. And I do believe that Western education is also to blame in the sense that Western cultures emphasize authenticity and honesty and “being true to yourself” while rejecting the notion of saying one thing while doing another as undesirable. Sure, there are hypocrites in the West just as there are in the East, but some kids will take their education more seriously than others…this is a failure of hypocrisy … a crisis of hypocrisy is upon us.

Ajmal Kamal Reviews Alakh Nagri: The Babas who really run Pakistan (and the world)



This is Ajmal Kamal‘s brilliant review of Mumtaz Mufti’s autobiography “alakh nagri”. It was published in Adabi Duniya but I think it deserves publication in as many places as possible. Unfortunately, those who cannot read Urdu will not be able to enjoy it, but those who can should not miss it. The second half is even better than the first, so don’t stop halfway 🙂

Ajmal Kamal

for those who don’t know Urdu, it is impossible for me to translate this, but a little of what it is about and the background to the book:

Qudratullah Shahab was a senior Pakistani bureaucrat who also dabbled in literature (and in the management of literary figures on behalf of the Martial Law regime of Field Marshal Ayub Khan). He later wrote a self-serving and intensely “Paknationalist” autobiography that remains a bestseller in Pakistan until today (the last time I was at Karachi Airport, it was near the top of the list of books the airport bookstall guy mentioned as “current bestsellers”). He cultivated (or was cultivated by) a group of “mystical-Islamist-Paknationalist” writers including Ashfaq Ahmed, Bano Qudsia and Mumtaz Mufti and over time these people all wrote books and articles that hinted (or outright claimed) that the other members of the cabal were spiritually enlightened and possessed some mysterious knowledge about the inner (real) workings of the universe…workings in which the creation of Pakistan and its rise as an Islamic power were the central issue of the age. The workings of this particular brand of Paknationalism are briefly reviewed here. For more, see here and here….. and some positive and “inside” views as well as a few skeptical reviews here.  (the skeptical reviews are rather far down the page).
Anyway, Alakh Nagri has a lot of stories about Qudratullah (and his disciples) and how they are moving the cause of Islam forward. Even when they act so strangely that observers claim “the bastard is dead drunk”. They are not drunk, they are being visited..

btw,  a less toxic and more pragmatic version of this “mystical babas of Pakistan” tradition is now in the hands of Professor Rafique Akhtar, who is, among other things, the spiritual mentor of General Kiyani and the hero of best-selling columnist Javed Choudhry. Professor Rafique is not as completely bananas as the Qudratullah Shahab party but even a relatively sane person has his quirks…he reportedly claimed to Javed Choudhry that he had the key that unlocks the 12 hard drives of the Quran and therefore had access to ALL spiritual AND temporal knowledge, from astrophysics to astral projection. I am not kidding..it’s in Javed Ch’s book.

http://farm1.static.flickr.com/16/22217289_7bf65e1e22.jpg?v=0Image result for professor rafique akhtar

دنیاداری کی مابعدالطیعیات

ممتاز مفتی کی ’’الکھ نگری‘‘ بلاشبہ ایک نہایت غیرمعمولی کتاب ہے ۔۔ کم و بیش اتنی ہی غیرمعمولی جتنا اس کا مصنف ہے یا اس کا موضوع۔ اسے ممتاز مفتی کی خودنوشت سوانح حیات کے دوسرے حصے کے طور پر شائع کیا گیا ہے۔ اس سوانح حیات کی پہلی جلد، جسے ’’علی پور کا ایلی‘‘ کا عنوان دیا گیا تھا،۱۹۶۰ء کے عشرے میں شائع ہوئی تھی۔ ’’ایلی‘‘ کو بڑی عجلت میں شائع کیا گیا تھا تاکہ یہ کتاب اس سال کے آدم جی ایوارڈ کی حقدار ہو سکے۔ سرورق پر ’’آدم جی انعام یافتہ‘‘ کی سرخی کے ساتھ اسے ناول کا باریک نقاب اُڑھایا گیا تھا کیونکہ نوبیل انعام کے اس مقامی نعم البدل کو غالباً خودنوشت سوانح عمریوں کی کوئی خاص پروا نہیں تھی۔ یہ الگ قصہ ہے کہ آخرکار جمیلہ ہاشمی کے ناول ’’تلاش بہاراں‘‘ کو اس اعزاز کا زیادہ مستحق سمجھا گیا۔ دونوں کتابوں کے درمیان مقابلہ نہایت ولولہ انگیز رہا ہو گا، کیونکہ ادبی معیارکے لحاظ سے دونوں ایک دوسرے کی ٹکر کی تھیں۔ کچھ بھی ہو، موقع ممتاز مفتی کے ہاتھ سے نکل گیا اور ’’ایلی‘‘ کو ایک ایسے ناول کے طور پر شہرت حاصل ہوئی جسے، بقول ابن انشا، آدم جی انعام نہیں ملا۔ اس کے باوجود ممتاز مفتی کو ان نک چڑھے نقادوں کی رائے سے متفق ہونے میں تیس برس کا عرصہ لگا جن کا خیال تھا کہ ’’ایلی‘‘ ناول نگاری کے تقاضے پورے نہیں کرتا۔ ۱۹۹۱ء میں شائع ہونے والے ایڈیشن میں آخرکار یہ انکشاف کیا گیا کہ دراصل ’’ایلی‘‘ ممتاز مفتی کی خودنوشت سوانح عمری کا پہلا حصہ تھا۔

سوانح عمری کے زیرتبصرہ دوسرے حصے پر نظر ڈالتے ہی معصوم پڑھنے والا حیرت سے دوچار ہو جاتا ہے، کیونکہ عموماً ایسا دیکھنے میں نہیں آتا کہ کسی شخص کی خودنوشت سوانح عمری کے سرورق پر کسی اور شخص کی تصویر کو زیبائش کے لیے استعمال کیا گیا ہو۔ لیکن ممتاز مفتی کے بقول ان کی کتاب کے سرورق پر قدرت اللہ شہاب کی ریٹائرڈ نورانی صورت کا جلوہ گر ہونا ہی عین مناسب ہے۔ دیباچے میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ممتاز مفتی نے اپنی زندگی کے پہلے نصف میں عورت کو دریافت کیا، جبکہ دوسرے نصف میں ان کی دریافت قدرت ﷲ شہاب کی ذات تھی۔
عام لوگوں کے ذہن میں شہاب کا تصور ایک کہنہ مشق بیوروکریٹ کا ہے جس نے چاپلوسی کے فنِ لطیف میں اپنی مہارت کی ابتدائی منزلیں غلام محمد اور اسکندرمرزا کے شفیق سائے میں طے کیں، اس سے پیشتر کہ انھیں جنرل (بعد میں فیلڈمارشل) کی سرکاری کٹلری میں ایک اعلیٰ مقام حاصل ہو سکے۔ پبلک شہاب کو پروگریسو پیپرز لمیٹڈ کے زیراہتمام شائع ہونے والے اخباروں (پاکستان ٹائمز، امروز اور ہفتہ وار لیل و نہار) پر سرکاری قبضے اور پاکستان کی ادبی تاریخ کے عجوبے یعنی رائٹرز گلڈ کے قیام جیسی نادر ترکیبوں کے اصل خالق کے طور پر جانتی ہے، اور اس میدان میں شہاب کی ذہانت کا مقابلہ ایک ایسے ہی عجیب الخلقت ادارے نیشنل پریس ٹرسٹ کے خالق یعنی الطاف گوہر سے ہو سکتا ہے۔ مفتی کا بہرحال یہ کہنا ہے کہ پبلک کو کچھ پتا نہیں۔
’’الکھ نگری‘‘ کے مطالعے سے یہ انکشاف ہوتا ہے کہ شہاب دراصل ان معدودے چند رازوں میں سے ایک تھے جو کائنات میں روزِ ازل سے آج تک وجود میں آئے ہیں۔ شہاب نے جو کام کیے، یا جن کاموں کی انجام دہی میں کلیدی کردار ادا کیا، احمق پبلک اپنی ناقص عقل کے ساتھ ان کی گرد کو بھی نہیں پہنچ سکتی۔ مثال کے طور پر، پڑھنے والا سانس روک کر پڑھتا ہے کہ ہمارے پاک وطن کے دارالحکومت کو کراچی سے پاک وطن کے قلب کے نزدیک ۔۔ یعنی شمال کی جانب اسلام آباد ۔۔ منتقل کرنا شہاب کا کارنامہ تھا۔ یہ فیصلہ بھی تن تنہا شہاب نے کیا تھا کہ اس ملک کو اسلامی جمہوریہ کہا جائے گا، اور اس سلسلے میں فیلڈمارشل کی خودساختہ کابینہ کے تمام ارکان کی مخالفت کو پرِکاہ سے زیادہ اہمیت نہ دی تھی۔ شہاب ہی نے فیلڈمارشل کو اقبال کا خودی کا تصور سمجھایا، اور بےچارے کو پُھسلا کر اس مسیحا کا روپ اختیار کرنے پر آمادہ کیا جس کی اس بدقسمت اسلامی جمہوریہ کو اس قدر شدید ضرورت تھی۔ شہاب ہی نے، آئین سازی کے چند سانڈنی سوار روحانی ماہرین کی مشاورت سے، ۱۹۶۲ء کا حسین آئین تیار کیا تھا۔ شہاب نے اس بات کا نہایت خوبی سے بندوبست کیا کہ فیلڈمارشل کو بابوں، درویشوں، بےروزگار وکیلوں اور اسی قسم کے دوسرے روحانی عاملوں کے

ذریعے آسمانی رہنمائی اور حفاظت متواتر حاصل رہے۔

چونکہ شہاب کو خود بھی ’’نائنٹی‘‘ جیسی پراسرار ہستیوں کی طرف سے آسمانی رہنمائی حاصل رہتی تھی (اس کی تفصیل کے لیے ’’شہاب نامہ‘‘ سے رجوع کیجیے جو ایک اور نادرروزگار خودنوشت سوانح عمری ہے) اس لیے انھوں نے وسیع تر قومی مفاد میں اور بہت سے کارنامے انجام دیے ہوں گے جن کی بابت شاید میں اور آپ کبھی نہ جان سکیں۔ لیکن ان کا سب سے بڑا کارنامہ اس وقت ظہورپذیر ہوا جب انھوں نے بھیس بدل کر، اوورکوٹ میں ملفوف، پیشانی پر جھکا ہوا فیلٹ ہیٹ پہنے، اپنے سگار لائٹر میں ایک ننھا سا کیمرا چھپائے، بقول ممتاز مفتی ’’ﷲ کے زیرو زیرو سیون‘‘ کی حیثیت سے، اسرائیل کا دورہ کیا۔ اگرچہ شہاب نے اپنا یہ سفر، جو براہ راست آئن فلیمنگ یا ابن صفی کی نگارشات سے ماخوذ معلوم ہوتا ہے، بظاہر اس مقصد سے اختیار کیا تھا کہ دنیا کو بتایا جا سکے کہ مقبوضہ علاقوں کے اسکولوں میں پڑھنے والے فلسطینی بچوں کی تعلیم کے لیے اسرائیلی حکام یونیسکو کی منظورکردہ درسی کتابیں استعمال نہیں کر رہے ہیں، لیکن ’’الکھ نگری‘‘ سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ مشن محض اصل بات کے پردے کی حیثیت رکھتا تھا۔ شہاب کا اصل مقصد دراصل مسجدِ اقصیٰ میں ایک رات بسر کرنا تھا، اور ظاہر ہے کہ انھوں نے اپنا یہ مقصد اسرائیل کے پورے سکیورٹی کے نظام کو ناکام بنا کر پورا کر لیا۔ لیکن آخر وہ مسجدِ اقصیٰ میں رات بھر قیام کیوں کرنا چاہتے تھے؟ ممتاز مفتی نے بالاًخر یہ راز فاش کر دیا ہے۔ شہاب کو ایک پراسرار اور irreversible مابعدالطبیعیاتی عمل شروع کرنا تھا۔ شہاب نے اس عمل کی ابتدا باقاعدہ ایک عمل پڑھنے کے ذریعے کر دی ہے جو ایک نہ ایک دن ریاست اسرائیل کو نیست و نابود کر ڈالے گا۔ چنانچہ جب یہ مبارک دن آئے تو آپ کو یاد رکھنا چاہیے کہ اس کا سہرا اسی کے سر پر باندھیں جو اس کا مستحق ہو۔ اسرائیل کے نیست و نابود ہونے کا پی ایل او، فلسطینی جدوجہد اور انتفاضہ جیسی معمولی چیزوں سے کوئی تعلق نہیں ہو گا۔
مجھ جیسے یا آپ جیسے عام پڑھنے والے کے لیے یہ سب کچھ قبول کرنا شاید دشوار ہو، جس کی وجہ ظاہر ہے یہ ہے کہ ہمیں اس غیرمعمولی کتاب سے نبردآزما ہونے کی مطلوبہ تیاری میسر نہیں۔ ’’الکھ نگری‘‘ پر ہاتھ ڈالنے سے پہلے ہمیں کچھ ابتدائی مطالعہ کرنا ہو گا۔ قدرت اﷲ شہاب کا ’’شہاب نامہ‘‘، ممتازمفتی کی ’’لبیک‘‘، بےمثال ادیب اشفاق احمد کی ’’ذکرِ شہاب‘‘ اور ’’سفردرسفر‘‘ اور Ashfaq Ahmed
 کی بیگم اور اتنی ہی بےمثال ادیبہ بانو قدسیہ کی ’’مردِ ابریشم‘‘ اس سلسلے میں لازمی مطالعے کا درجہ رکھتی ہیں۔ اگر آپ ان عظیم میاں بیوی کے متصوفانہ ٹی وی کھیلوں سے جاں بر ہونے کا حوصلہ اور صبر رکھتے ہیں تو آپ کو بلاشبہ کائنات کے اس عظیم راز کا سامنا کرنے کی، جس کا نام قدرت ﷲ شہاب ہے، زیادہ بہتر صلاحیت حاصل ہے۔ لیکن سب سے بڑھ کر’’الکھ نگری‘‘ کے مطالعے کی تیاری کے لیے ہمیں وہ سب کچھ اَن سیکھا کرنا ہو گا جو مغرب کے سائنسی اور سماجی علوم کے ذریعے ہمارے ذہنوں کو آلودہ کرتا رہا ہے۔ بےشک یہ ایک دشوار کام ہو گا، لیکن اگر آدمی کوئی کام کرنے کی ٹھان لے تو کوئی چیز ناممکن نہیں۔ مثال کے طور پر تاریخ کو لیجیے۔
اکثر لوگ اس عام غلط فہمی کا شکار معلوم ہوتے ہیں کہ قرارداد پاکستان ۱۹۴۰ء میں لاہور میں منعقد ہونے والے آل انڈیا مسلم لیگ کے اجلاس میں منظور کی گئی تھی اور پاکستان کا قیام قائداعظم کی قیادت میں ہندوستانی مسلمانوں کی سیاسی جدوجہد کا نتیجہ تھا۔ اس سے زیادہ بعیدازحقیقت بات کوئی اور نہیں ہو سکتی۔ پاکستان کے قیام کا فیصلہ اس سے بہت پہلے اس وقت ہو چکا تھا جب مسلم لیگ کو اس کا خیال تک نہ آیا تھا، اور یہ فیصلہ غالباً آسمان اور زمین کے درمیان واقع کسی مقام پر ایک ایسے اجلاس میں ہوا تھا جس میں بابے، قطب، درویش اور فقیر شریک ہوے تھے، اور اس اجلاس کی صدارت ’’سرکار قبلہ‘‘ نامی ایک بزرگ نے کی تھی جن کی روحانی صلاحیتیں خاصی قابل لحاظ ہیں اور جن کا مزار (تعجب کا موقع نہیں) موجودہ اسلام آباد کے قریب واقع ہے۔ اسی طرح ممتاز مفتی نے ریڈکلف اور نہرو کے گٹھ جوڑ کو گورداسپور کی مشرقی پنجاب میں بظاہر غیرمنصفانہ شمولیت اور کشمیر پر بھارت کے بزور قبضے کی ذمہ داری سے آزاد کر دیا ہے۔ یہ دونوں فیصلے، مفتی کے مطابق، خدائی دانش نے کیے تھے۔ تو پھر اس میں حیرت کی کیا بات ہے کہ پچاس برس گزرنے کے باوجود کشمیر کے مسئلے کے حل ہونے کے کوئی آثار دکھائی نہیں دیتے۔ جن لوگوں کو کشمیری مجاہدین کہا جاتا ہے وہ ممتاز مفتی کے خیال کی رو سے ایک ہاری ہوئی جنگ لڑ رہے ہیں۔ آخر خدائی دانش کے کیے ہوے فیصلے کو کون بدل سکتا ہے؟ اسی طرح ۱۹۴۷ء کے فرقہ وارانہ فسادات میں مسلمانوں کا قتل عام کرنے والے جنونی ہندو اور سکھ نہیں تھے۔ یہ بھی اسی خدائی دانش کا کیا ہوا فیصلہ تھا جس کا مقصد یہ تھا کہ مسلمانوں کی ایک خاصی بڑی تعداد کو شہیدوں میں تبدیل کر دیا جائے تاکہ وہ ایک روحانی فوج کے طور پر واگہ کی سرحد کی حفاظت کے فرائض سنبھال سکے۔ ممتاز مفتی نے، جو خود اس روحانی فوج میں بھرتی ہونے سے بال بال بچ گئے، یہ راز فاش نہیں کیا کہ یہ بھرتی جبری تھی یا اختیاری۔
مذموم مغربی تعلیم نے ہمارے ذہنوں کو اس حد تک پراگندہ کر دیا ہے کہ ہم عجیب و غریب خیالات کو قبول کرنے پر آمادہ ہو گئے ہیں۔ مثلاً بہت سے لوگ یہ سمجھنے لگے ہیں کہ اپنے قیام کے بعد سے ہمارا پاک وطن سیاسی، اقتصادی، تاریخی، جغرافیائی اور دیگر انسانی عوامل کے زیراثر رہا ہے! ایسا سوچنے والے بلاشبہ پرلے درجے کے احمق ہیں۔ پاکستان کو درحقیقت اس ماسٹرپلان کے تحت چلایا جا رہا ہے جسے سرکار قبلہ نے نہایت عرق ریزی کے ساتھ تیار کیا تھا اور جس کی تیاری میں ان کو کائنات کی ان پراسرار قوتوں کی عملی اعانت حاصل تھی جن کا تصور کرنا عام فانی انسانوں کے بس کی بات نہیں۔ ہم فانیوں کے دماغوں میں سب کچھ اس ناقابل بیان حد تک گڈمڈ ہو چکا ہے کہ بعض لوگ یہ تک خیال کرنے لگے ہیں کہ ۱۹۶۵ء کی جنگ لڑنے (اور جیساکہ اس وقت کے کمانڈرانچیف جنرل موسیٰ خان نے نہایت سادہ ذہنی سے بتایا ہے) قریب قریب ہارنے والے پاکستان کے عوام اور افواج ہیں۔ ممتاز مفتی کے دماغ میں یہ سب کچھ آئینے کی طرح صاف ہے، کیونکہ ان کی معلومات کا ذریعہ عبدالغفور ایڈووکیٹ ہیں، یعنی امورِ دفاع کے وہ عظیم ترین ماہر جنھیں دنیا نے جانا (یا شاید نہیں جانا)۔ ’’الکھ نگری‘‘ میں صفحہ ۹۴۷ پر ایڈووکیٹ صاحب کے اس خط کا عکس دیا گیا ہے جس میں انھوں نے انکشاف کیا ہے کہ ۱۹۶۵ء کی جنگ پاکستان نے درویشوں کی ایک فوج کی قیادت میں لڑی (اور ظاہر ہے جیتی) تھی جن کو روحانی ایٹمی طاقت حاصل تھی۔ اس انکشاف کی روشنی میں یہ بات عیاں ہو جاتی ہے کہ نشان حیدر اور دوسرے اعزازات یقیناً غلط افراد کو دیے گئے تھے۔
سوال پیدا ہوتا ہے کہ کائنات کی پراسرار قوتوں کو آخر اس بدقسمت ملک کے معاملات سے اس قدر دلچسپی کیوں رہی ہے؟ اس سوال کا نہایت قریبی تعلق بیوروکریٹ کے طور پر قدرت ﷲ شہاب کی زندگی کے عروج و زوال اور ان کے قرابت داروں کی دنیاوی اور روحانی ترقی کے معاملات سے ہے۔ ان مقربین میں اشفاق احمد، بانو قدسیہ (اور ان کی اولادیں)، ابن انشا، احمد بشیر (مع متعلقین)، جمیل الدین عالی، اور شہاب کے حلقے کے دیگر نامور اور کم نامور افراد شامل ہیں۔ یہ کہنا یقیناً غیرضروری ہے کہ ممتاز مفتی اور ان کے گھروالوں کو خدا کے ان منتخب بندوں میں سب سے نمایاں مقام حاصل ہے، اگرچہ اشفاق اور قدسیہ کا اس رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔
تاہم یہ مسلّمہ امر ہے کہ ہم کائنات کی ان پراسرار قوتوں کے طریقِ عمل کو سمجھنے کی جانب اس وقت تک پہلا قدم بھی نہیں اٹھا سکتے جب تک ہم اس کھیل کے پہلے قاعدے سے پوری طرح واقف نہ ہو جائیں۔ اور وہ پہلا قاعدہ یہ ہے کہ ظاہر محض گمراہ کن نہیں ہوتا بلکہ بالکل غلط ہوتا ہے۔ مثلاً ہو سکتا ہے کہ ہمیں یہ بات بڑی تعجب خیز معلوم ہو کہ ۱۹۵۰ء کے عشرے میں کائنات کی ان پراسرار قوتوں کو صرف دو چیزوں سے دلچسپی تھی: اسلامی تہذیب کا احیا، اور ممتاز مفتی کی پے فِکسیشن (pay fixation)۔ بھولے بھالے پڑھنے والے کو کچھ اور واقعات بھی حیران کن معلوم ہوں گے، مثلاً کس طرح چار ایک بابے ممتاز مفتی کو نقل مکانی کر کے پنڈی جا بسنے اور شہاب کی ماتحتی میں ایک ایسی ملازمت اختیار کرنے پر آمادہ کرتے ہیں جسے صرف ممتاز مفتی کو کھپانے کے لیے اختراع کیا گیا ہے۔ کس طرح ایک سہانی صبح ایک نہایت موقعے کا پلاٹ خودبخود ممتازمفتی کی جھولی میں آ گرتا ہے، اور بعد میں، سرکاری ملازمت کے بہت سے درجات طے کر لینے کے بعد، جب وہ اس پر ایک مکان تعمیر کرنے کا ارادہ کرتے ہیں (جبکہ ان کے بینک اکاؤنٹ میں کلہم چودہ ہزار روپے ہیں)، کس طرح شہاب کا بہنوئی اس بات کا ذمہ لے لیتا ہے کہ مفتی اور ان کے لواحقین کو ایک مناسب، پُرآسائش مکان میسر آ جائے۔ ’’ایسے کاموں میں غیبی امداد ہو جاتی ہے۔ شہاب نے سچ کہاتھا۔ پتہ نہیں کہاں کہاں سے رقمیں آتی گئیں، انجانے وسیلے پیدا ہوتے گئے، انجانی جگہوں سے رقمیں آتی گئیں‘‘(صفحہ۷۵۵) اور دیکھتے ہی دیکھتے مفتی کا مکان تیار ہو گیا۔
اسی طرح جب احمد بشیر اس کشف سے دوچار ہوتے ہیں کہ ان کے دنیا میں آنے کا واحد مقصد فلم سازی کی دنیا میں انقلاب برپا کرنا تھا، تو اچانک کہیں سے ایک فیلوشپ اڑن کھٹولے کی طرح نمودارہوتی ہے اور بشیر کو آن کی آن میں اڑا کر امریکہ لے جاتی ہے تاکہ وہ فلمی دنیا میں انقلاب برپا کرنے کی مبادیات سیکھ سکیں (صفحہ۴۹۵)۔ اس آسمانی وظیفے اور اعلیٰ تربیت کے نتیجے میں ’’نیلا پربت‘‘ نامی فلم تیار ہوئی جو دنیا میں متحرک کیمرے کی ایجاد سے آج تک کی عظیم ترین فلم کا درجہ رکھتی ہے۔ جب ابن انشا کو کتابوں کی دنیا سے مستقل طور پر منسلک ہونے کی خواہش محسوس ہوئی تو کائنات کی پراسرار قوتیں نیشنل بک کاؤنسل آف پاکستان کو وجود میں لے آئیں اور انشا نے خود کو اس ادارے کے ڈائرکٹر کے معمولی عہدے پر متمکن پایا۔ یہ درست ہے کہ ابن انشا کو اپنے کام کی تمام دشواریوں کا سامنا کرنا پڑا جن میں ملک ملک کی خاک پھانکنا اور مختلف کتابی موضوعات پر دنیا کے عجیب وغریب مقامات پر ہونے والے بوریت آمیز سیمیناروں میں شرکت کرنا بھی شامل تھا، لیکن کیا کیا جائے، یہ ان کی خواہش ہی کا شاخسانہ تھا۔ شاید کائنات کی انہی پراسرار قوتوں نے ہمارے سب سے زیادہ باصلاحیت ادیب اشفاق احمد کو ایک اتنے ہی علمی ادارے مرکزی اردو بورڈ کی بادشاہی پر فائز کیا۔ اشفاق نے اپنی فطری بذلہ سنجی سے کام لیتے ہوے بعد میں اس ادارے کا نام بدلوا کر اردو سائنس بورڈ رکھوا دیا۔ وہ اپنے معزول کیے جانے تک بورڈ کے تاحیات سربراہ تھے اور اس کے لیے خاص طور پر تعمیر کی ہوئی دومنزلہ عمارت کی زمینی منزل پر وقت گزارتے تھے، جبکہ اس عمارت کی بالائی منزل پر بانوقدسیہ، اس بات سے صوفیانہ طور پر بےنیاز کہ وہ سرکاری طور پر اردو سائنس بورڈ کے عملے کی رکن نہیں ہیں، بیٹھی اپنے بےمثال ٹی وی ڈرامے، ناول اور افسانے تحریر کیا کرتی تھیں جو اردو اور سائنس دونوں میدانوں میں حیرت انگیز اضافوں کا درجہ رکھتے ہیں۔ خدا کے ان تمام منتخب افراد کی اتنی ہی باصلاحیت اور منتخب اولادوں کا بھی کائنات کی پراسرارقوتوں نے خاص خیال رکھا۔ اس سلسلے میں صرف ابوالاثر حفیظ جالندھری کو مایوسی کا سامنا کرنا پڑا، حالانکہ وہ ان دنیاوی فوائد کی درخواست کرنے بنفس نفیس، اپنی ننھی بیٹی کو کاندھے پر بٹھائے، ایک سے زیادہ بار شہاب کے دربار میں حاضر ہوے تھے اور کہا تھا، ’’دیکھ شہاب، میرے لیے بےشک کچھ نہ کر، لیکن اس بچی پر ترس کھا، ورنہ یہ معصوم بچی جوان ہو کر پیشہ کرنے پر مجبور ہو گی‘‘ (صفحہ۴۱۲)۔ چونکہ درویشوں کے رنگ نرالے ہوتے ہیں، شہاب نے اس پر محض اتنا تبصرہ کیا: ’’عجیب آدمی ہیں حفیظ صاحب، خوب آدمی ہیں،‘‘ اور اس کے بعد یہ وطیرہ اختیار کر لیا کہ جب ابوالاثر کو سڑک کے کنارے کھڑے دیکھتے تو گاڑی روکنے کے بجاے اور تیز کر لیتے۔
یاد رکھیے، ظاہر ہمیشہ دھوکا دیتا ہے۔ اگر آپ شہاب کو کبھی ایسی کیفیت میں پائیں جو الکحل کے اثرات سے نہایت قریبی مماثلت رکھتی ہو اور دیکھنے والے صاف صاف کہہ رہے ہوں کہ ’’دی باسٹرڈ اِز ڈیڈ ڈرَنک!‘‘ تو یہ ہرگز مت بھولیے کہ اس نظارے کی ایک چوتھی سمت بھی ہے۔ عین ممکن ہے وہ اس وقت کسی کربناک روحانی واردات (’’چَھلکن‘‘) سے گزر رہے ہوں یا ہالینڈ میں کچھ مدت گزارنے کے باعث ان کے ’’وجدان میں شدت پیدا ہو گئی ہو‘‘ (صفحہ۷۱۶)۔ اگر انھیں ایسی خواتین کو خوش آمدید کہتے دیکھا جائے جو اپنے اخلاقی معیارات کے بارے میں بظاہر زیادہ پُرتکلف یا سخت گیر رویہ نہ رکھتی ہوں اور کسی دفتری مشکل کا حل ڈھونڈنے کے لیے شہاب کے پاس آئی ہوں، تو آپ کو چاہیے کہ خود کو متواتر یہ یاد دلاتے رہیں کہ یہ دراصل ’’چمگادڑیں‘‘ ہیں جنھیں کائنات کی پراسرار (مگر شرانگیز) قوتوں نے اس لیے بھیجا ہے کہ وہ شہاب کو سیدھے راستے سے بھٹکانے کی اپنی سی کوشش کر سکیں (صفحہ۴۔۵۷۰ا)۔ اگر شہاب ان عورتوں کو ایک ہی جانماز پر اپنے ’’پہلو بہ پہلو‘‘ کھڑا کر کے اپنے ساتھ نماز پڑھاتے ہوے دیکھے جائیں (صفحہ۵۸۴) تو یہ مت سمجھیے کہ وہ حدود آرڈیننس کی خلاف ورزی کے مرتکب ہو رہے ہیں یا کسی قسم کی کجروی کا شکار ہیں۔ وہ تو دراصل ان بےچاری بھٹکی ہوئی عورتوں کو روحانیت کی دنیا سے متعارف کرا رہے ہیں۔ اگر آپ مفتی کو اسلام آباد کے بعض زندہ درویشوں کی مدد سے ایک ضرورت مند خاتون سے شہاب کی پوشیدہ ملاقات کا بندوبست کراتے ہوے دیکھیں (صفحہ۶۔۵۸۵) تو یاد رکھیے کہ ان کا مقصد محض مذکورہ خاتون کی روحانی نشوونما کا خیال رکھنا ہے، اور ساتھ ہی شہاب کی اور ان کی باعفت بیگم کی نشوونما کا بھی۔
اور ایک لمحے کے لیے بھی یہ خیال نہ کیجیے کہ یہ سب قصے بیان کرنے سے مفتی کا مقصد ان دنیاوی فوائد کے لیے شہاب کے حق میں اظہارِ تشکر کرنا ہے جو ان کو اپنی خدمات کے عوض حاصل ہوے۔ مفتی کی اس تمام قصہ گوئی کا مقصد دراصل شہاب کی اس مرکزی حیثیت کا انکشاف کرنا ہے جو ان کو کائنات میں حاصل ہے۔ بالکل اسی طرح شہاب اگر فیلڈمارشل کے اس قدر دل دادہ تھے، اور ان کی موجودگی میں یوں باادب کھڑے رہتےتھے جیسے ’’پرائمری اسکول کا بچہ مولوی صاحب کے سامنے کھڑا ہو جاتا ہے‘‘ (صفحہ۵۱۰) تو اس لیے نہیں کہ وہ صدر پاکستان کے عہدے پر فائز تھے، بلکہ وہ درحقیقت ایوب خان کی زیرکی اور بےپناہ ذہنی صلاحیتوں سے متاثر تھے، اور اس میں کسی کو کیا شبہ ہو سکتا ہے کہ فیلڈمارشل جیسے عظیم دانشور دنیا میں خال خال ہی پیدا ہوتے ہیں۔ آخر سربراہانِ مملکت کو بھی اپنی چوتھی سمت رکھنے کا حق ہے، یا نہیں؟ شہاب کی زندگی میں صرف دو ہی دیرینہ خوہشیں تھیں: ایک، ’’رسالتمآب کی حیاتِ طیبہ پر کل وقتی کام کرنا‘‘ (صفحہ۶۰۴) اور دوسرے، مناسب وقت آنے پر سول سروس سے ریٹائر ہو کر فیلڈمارشل کے ’’افکار کو پھیلانے اور عام کرنے کے لیے کتابیں لکھنا اور لیکچر دینا‘‘ (صفحہ۶۰۵)۔ شہاب نے اپنے ممدوح کے سامنے کلمۂ حق پیش کرنے میں ذرا بھی جھجھک کا مظاہرہ نہ کیا اور صاف صاف کہہ دیا کہ ’’دراصل میرا مشن ہی جنابِ صدر کے افکار اور فلسفے کی تشریح ہو گا۔‘‘ (صفحہ۶۰۵)۔ شہاب کی گوناگوں روحانی مشغولیات نے انھیں مہلت نہ دی کہ وہ اپنی پہلی خواہش پر عمل کر سکتے، البتہ انھوں نے دل لگا کر’’شہاب نامہ‘‘ کی تصنیف کا کام مکمل کر لیا جو فیلڈمارشل کی ذات اور ان کی اپنی ذات دونوں کے حق میں ایک خراجِ عقیدت کے طور پر رہتی دنیا تک باقی رہے گا۔ اس شاہکار کو تخلیق کر کے شہاب نے نہ صرف ادبیاتِ عالم کی دنیا میں لازوال مقام حاصل کر لیا ہے بلکہ اپنے مداح ناقدین کے خیالات کو بھی حق بجانب ثابت کر دیا ہے، جن میں بےمثال نقاد محمد حسن عسکری بھی شامل تھے جنھوں نے شہاب کی ابتدائی تحریروں ہی سے ان کی بےپناہ صلاحیتوں کو بھانپ لیا تھا۔
اوپر جو کچھ بیان کیا گیا ہے اسے سنجیدگی سے لینے پر خواہ ہم خود کو آمادہ کر سکیں یا نہ کر سکیں، صہیونی لابی نے اسے یقیناً بےحد سنجیدگی سے لیا۔ صہیونیوں کو جوں ہی پتا چلا کہ ’’کوئی شخص مسجد اقصیٰ میں ایسا عمل کر گیا ہے جو اسرائیل کے لیے تباہی کا باعث ہو گا‘‘ (صفحہ۷۷۶) تو انھوں نے جذبۂ انتقام سے مجبور ہو کر اپنی تاریک شیطانی قوتوں کو شہاب اور ان کے مقربین کی تباہی پر لگا دیا۔ ’’اسرائیلی جادو قدرت اللہ کے خلاف حرکت میں آ گیا۔‘‘ ایک روز جب شہاب پیرس کی ایک سڑک کے کنارے کھڑے ٹیکسی کے منتظر تھے، ایک سیاہ لیموزین ان کے سامنے رکی اور انھیں لفٹ کی پیشکش کی گئی۔ چونکہ ’’اللہ کا زیرو زیرو سیون‘‘ ہونے کے باوجود اس قسم کی کسی ترغیب کی مزاحمت کرنا شہاب کے لیے دشوارتھا، وہ گاڑی میں سوار ہو گئے اور پچھلی سیٹ پر بیٹھے ہوے صہیونی جادوگر کو اپنا کام دکھانے کا موقع مل گیا۔ مفتی ہمیں بتاتے ہیں کہ یہودیوں کے کیے ہوے کالے جادو کے زیراثر شہاب ایک ’’بدبودار گوشت کے لوتھڑے ‘‘ میں تبدیل ہو گئے (صفحہ۷۷۱)۔ شہاب کے مخالفین، جن کی نگاہیں ظاہر کے دوسری طرف دیکھنے سے افسوسناک طور پر قاصر ہیں، کہیں گے کہ وہ یہودیوں کی مداخلت سے پہلے بھی ایسے ہی تھے، لیکن آپ کو چاہیے کہ ان گستاخ لوگوں کی بات کو نظرانداز کر دیں۔ ’’اورجب وہ وطن واپس لوٹا تو وہ آدھا آدمی تھا۔‘‘ یہی نہیں، ’’اسرائیلی جادو کی وجہ سے ڈاکٹر عفت فوت ہوئیں‘‘ (صفحہ۷۷)۔ خود ممتاز مفتی الرجی میں مبتلا ہو گئے۔ شہاب کے کچھ اورعقیدت مندوں کو قسم قسم کے جِلدی امراض نے گھیر لیا۔
اپنے عالیشان دنیاوی کریئر سے ریٹائر ہونے کے بعد شہاب نے اسلام آباد میں ضرورت مندوں کو تعویذ گنڈے تقسیم کرنے کا کام سنبھال لیا، اور مفتی نے اس کام میں اپنی مخصوص مستعدی سے اعانت کرتے ہوے ضرورت مندوں کو گھیر گھیر کر ان کے پاس لانا شروع کر دیا (صفحہ۸۹۸)۔ اس سے جو وقت باقی بچتا اس میں شہاب اپنا شاہکار ’’شہاب نامہ‘‘ لکھتے اور مناسب گریڈ کے شرکا پر مشتمل ادبی نشستوں میں اس کے منتخب حصے پڑھ کر سناتے۔ انھوں نے اسی شہر میں آخری سانس لیا جو ان کی کوشش سے اسلامی جمہوریہ کا دارالحکومت بنا تھا، اور اپنے پیچھے اپنے مقربین کے حلقے کے ارکان کو سوگوار چھوڑا جو اب ان سے صرف خوابوں، روحانی کشفوں اور بابوں کی خفیہ میٹنگوں ہی میں ملاقات کر سکتے ہیں۔ لیکن، مفتی کو پورا یقین ہے، ایک دن آئے گا، اور پانچ سات برس کے اندر آئے گا، جب دنیا پر’’یہ بھید کھلے گا کہ قدرت اللہ شہاب کون تھا اور وہ کس کام کو سرانجام دینے آیا تھا‘‘ (صفحہ۹۳۴)۔
آئیے ہم سب اس مبارک دن کا انتظار کریں، اور انتظار کے اس وقفے کے دوران اللہ تعالیٰ سے دعا کریں کہ وہ نوبیل انعام کے ججوں کو اتنی سوجھ بوجھ عطا کرے کہ وہ مفتی کی ادیبانہ عظمت کا احساس کر سکیں۔ اگر آدم جی ایوارڈ کے منصفین کی طرح وہ بھی خودنوشت سوانح عمریوں کے شائق نہیں ثابت ہوے، خواہ وہ کتنے ہی پُرتخیل انداز میں لکھی گئی ہوں، تو ہم خود کوایک اور خیال سے تسکین دے سکتے ہیں۔ ’’الکھ نگری‘‘ نے کسی شک و شبے کے بغیر یہ ثابت کر دیا ہے کہ ہمیں، جو اسلامی جمہوریہ کے شہری ہیں، اظہار کی مطلق اور مکمل آزادی حاصل ہے۔ یہ اسی ملک میں ممکن ہے، دنیا میں کہیں اور نہیں، کہ آپ کسی بھی درجے کی کتاب کے بےباکی سے لکھے جانے، بلاروک ٹوک شائع ہونے اور راتوں رات بیسٹ سیلربن جانے کے عمل کا مشاہدہ کر سکتے ہیں۔

Transgender surgery. A civil rights issue?

Dr McHugh doesnt think so, and he has just said so in the WSJ.

Yet policy makers and the media are doing no favors either to the public or the transgendered by treating their confusions as a right in need of defending rather than as a mental disorder that deserves understanding, treatment and prevention. This intensely felt sense of being transgendered constitutes a mental disorder in two respects. The first is that the idea of sex misalignment is simply mistaken—it does not correspond with physical reality. The second is that it can lead to grim psychological outcomes.

The transgendered suffer a disorder of “assumption” like those in other disorders familiar to psychiatrists. With the transgendered, the disordered assumption is that the individual differs from what seems given in nature—namely one’s maleness or femaleness. Other kinds of disordered assumptions are held by those who suffer from anorexia and bulimia nervosa, where the assumption that departs from physical reality is the belief by the dangerously thin that they are overweight.


At the heart of the problem is confusion over the nature of the transgendered. “Sex change” is biologically impossible. People who undergo sex-reassignment surgery do not change from men to women or vice versa. Rather, they become feminized men or masculinized women. Claiming that this is civil-rights matter and encouraging surgical intervention is in reality to collaborate with and promote a mental disorder.

Dr. McHugh, former psychiatrist in chief at Johns Hopkins Hospital, is the author of “Try to Remember: Psychiatry’s Clash Over Meaning, Memory, and Mind” (Dana Press, 2008).

What do you think?

I think some, very few, people have such severe gender dysphoria that they really should change their own gender identification to the opposite sex. i.e., I think there are (and have seen, though not managed) patients who, as children, are completely and totally unhappy about their gender. There are young boys who endlessly dream of being a girl and young girls who desperately want to be boys. I assume some of the same carries over into adult life. If gender dysphoria is powerful and persistent, why not allow them to live as the opposite gender?
But I also think any surgery is cosmetic and is not a medical necessity and should not be done to children. I realize that this is a bit of a muddled position. It’s a muddled topic. I am wary of surgery because it is so hard to reverse and is such a “physical” treatment for what is, after all, a psychological issue… a problem that the patient may think will be helped by surgery, but that the data (and the surgical procedures themselves) suggest is not cured by surgery in the sense of “no more problem”.

The SJW community is fully committed to this cause and it has mainstream liberal support. But I am not sure the SJW community has thought it through. Just as an example, the same community is committed to the belief that sex roles are social constructs, not biological. That leads to obvious difficulties with this topic.
Anyway, I think civil rights for people who do opt to live like the opposite gender is not a bad cause (everyone should be free to live as they please as long as they dont hurt others, etc), but surgery for children may be a step too far.
I am open to being converted, one way or the other 🙂